2 ربيع الأول 1439 | En | FrDeId | Ru | Tr
مفصل تلاش
عقائد خاندان اور معاشرہ مالی معاملات آداب و اخلاق جرائم اور فیصلے مسائل رسم و رواج نت نئے مسائل و احکام عبادات

فروخت شدہ چیز کی قیمت میں بیچنے کے بعد رد وبدل كرنا

فتوی نمبر ٢٨١٠ بابت سال ٢٠٠٥ مندرج استفتاء پر ہم مطلع ہوئے جو حسب ذیل سوال پر مشتمل ہے:

میری سگی بہن نے ابتدائی عقد کرکے زمین کا ایک پلاٹ بیچ دیا پھر کچھ مدت کے بعد اس زمین کے قریب سرکاری روڈ بنایا گیا اور وہاں بجلی لائن بھی پہنچائی گئی جس کے نتیجے میں اس زمین کی قیمت بڑھ گئی، تو کیا میری بہن اب بڑھی ہوئی قیمت کا مطالبہ کرسکتی ہے؟

جواب : عالی جناب ڈاکٹر علی جمعہ محمد حفظہ اللہ

اللہ تعالی فرماتا ہے: (يَا أَيُّهَا الَّذِينَ آمَنُواْ أَوْفُواْ بِالْعُقُودِ) اے ایمان والو! اپنے قول كو پورے کرو[المائدہ : ١]. اور حضرت نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا ارشاد ہے:''المسلمون عند شروطھم''، مسلمان اپنی شرطوں کے پابند ہوتے ہیں ۔ اور آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے ارشاد فرمایا: "البیعان بالخیار ما لم یتفرقا''، خرید و فروخت والوں کو الگ ہونے سے پہلے تک اختیار حاصل ہے'' اورمعاملہ کرنے والے دونوں فریق کی شریعت وہی ہوتی ہے جو باہم طے پا ئے.
اس بنا پر مذکورہ بالا سوال میں بیان کردہ عقد کے بارے میں حکم یہ ہے کہ عقد نامے میں تحریر کردہ قیمت ہی دونوں فریق پر لازمی ہے ، اور فروخت کرنے والے کو یہ حق نہیں پہونچتا کہ عقد تحریر کرنے کے بعد اس سے زیادہ قیمت طلب کرے، اور اگر خرید نے والا فروخت شدہ چیز کو واپس لیكر پهر فروخت کرنے والے کے ہاتھ از سر نو فروخت کرے تو اور بات ہے.

باقى اللہ سبحانہ و تعالی زیادہ بہتر جاننے والا ہے.

صفحہء اول دار الافتاء کے بارے میں استفتاء ویب سائٹ کا نقشہ آپ کی رائے اور تجویزیں ہم سے رابطہ کریں